ترے شیشے میں مئے باقی نہیں ہے




ترے شیشے میں مئے باقی نہیں ہے
بتا کیا تو مرا ساقی نہیں ہے ؟
سمندر سے ملے پیاسے کو شبنم !
بخیلی ہے یہ رزاقی نہیں ہے
علامہ اقبال




اپنا تبصرہ بھیجیں