تجھے یاد کیا نہیں ہے میرے دل کا وہ زمانہ ؟




تجھے یاد کیا نہیں ہے میرے دل کا وہ زمانہ ؟
وہ ادب گہ محبت ! وہ نگہ کا تازیانہ !
یہہ بتان عصر حاضر کے بنے ہیں مدرسے میں
نہ ادائے کافرانہ ! نہ تراش آزرانہ !
نہیں اس کھلی فضا میں کوئی کوشۂ فراغت
یہ جہاں عجب جہاں ہے ! نہ قفس ، نہ آشیانہ
رگ تاک منتظر ہے تری بارش کرم کی
کہ عجم کے میکدوں میں نہ رہی مئے مغانہ !
مرے ہم صفیر اسے بھی اثر بہار سمجھے
انہیں کیا خبر کہ کیا ہے یہ نوائے عاشقانہ
مرے خاک و خوں سے تو نے یہ جہاں کیا ہے پیدا
صلہ شہید کیا ہے ؟ تب و تاب جاودانہ
تری بندہ پروری سے مرے دن گزر رہے ہیں
نہ گلہ ہے دوستوں کا، نہ شکایت زمانہ !
علامہ اقبال




اپنا تبصرہ بھیجیں