رابطے




ہان ابھی سوچ لے
فیصلوں کا سفر
لفط کی نرم چھاؤں میں کٹتا نہیں،
اور سن
فیصلوں کی ندامت سے تکلیف دہ کوئی بھی دک نہیں،
جتنے خدشے مرے ساتھ چلنے میں ہیں
اس دور ا ہے پہ رک
اور انہیں اپنی آنکھوں مین ترتیب دے،
جان لے
وقت کے دشت بے برگ میں واپسی کے لئے کوئی رستہ نہیں
(منظروں کا نیا پن برانی رتوں کے لئے موت ہے)

جو ہوا، میرے جملے کے آغاز میں
تیرے بالوں کو چھوتے ہوئے چل رہی تھی اسی وقت سے
مرچکی ہے کہ اب
اس کا ہونا نہ ہونا ترے واسطے ایک ہے
(اور تجھ کو پتہ ہے کسی چیز کی
زندگی اس تعلق سے ہے جو کسی ذات کے رابطے سے بنے)

ہاں یہی وقت ہے
رابطے اور تعلق کے معنی سمجھ،
جتنے خدشے مرے ساتھ چلنے میں ہیں
اس دوراہے پہ رک
اور انہیں اپنی آنکھوں میں ترتیب دے
کہ ابھی تیرے ہاتھوں کا ہر رابطہ
تیرے ہاتھوں میں ہے
امجد اسلام امجد




اپنا تبصرہ بھیجیں