جب رزق مقدر ہے تو کیوں خاک سے لے آؤں




جب رزق مقدر ہے تو کیوں خاک سے لے آؤں
تو شہ ہی جو لانا ہے تو افلاک سے لے آؤں
آگے بھی کئی جال ہیں لیکن دل ناداں !
پہلے تو تجھے زلف کے پیچاک سے لے آؤں
کیا گنج گہر کی مرے دامن کو کمی ہے
چاہوں تو ابھی دیدہ نمناک سے لے آؤں
دکھلاتا ہوں گم گشتہ قبیلوں کی نشانی
کچھ تار کسی پیرہن چاک سے لے آؤں
یاراں ! مجھے ان چیزوں سے نشہ نہیں ملتا
ورنہ تو یہ شے میں بھی رگ تاک سے لے آؤں
یوں ہے کہ مجھے گرمی محفل کا نہیں شوق
میں آگ تو اپنے خس و خاشاک سے لے آؤں
عرفان صدیقی




اپنا تبصرہ بھیجیں