سندیسہ




سندیسہ
اسے کہنا !
یہاں سب کچھ
تمہارے بن ادھورا ہے
گئے لمحوں کی یادیں ہیں
عذاب زندگانی ہے
فراق نا گہانی ہے
اسے کہنا !
کہ لوٹ آئے
بقا بلوچؔ




اپنا تبصرہ بھیجیں