رین گئی، لٹکے سب تارے




رین گئی، لٹکے سب تارے
اب تو جاگ مسافر پیارے
آوا کون سرائیں ڈیرے
ساتھ تیار مسافر تیرے
تین نہ سینوں کوچ نگارے
اب تو جاگ مسافر پیارے
کرلے اج کرنی دے بیرا
بوڑھ نہ ہوسی آون تیرا
ساتھی چلو چل پکارے
اب تو جاگ مسافر پیارے
کیا سردھن کیا نردھن پوڑے
اپنے اپنے دیش کو دوڑے
لدھا نام لے لیو سبھارے
اب تو جاگ مسافر پیارے
موتی چونی پارس پاسے
پاس سمندر مرو پیاں سے
کھول اکھیں اٹھ بوہ بھکارے
اب تو جاگ مسافر پیارے
بلھیا شوہ دی پیریں پڑئیے
غفلت چھوڑ کجھ حیلہ کریئے
مرگ جتن بن کھیت اجاڑے
اب تو جاگ مسافر پیارے
رین گئی لٹکے سب تارے
اب تو جاگ مسافر پیارے
بلھے شاہ ؔ




اپنا تبصرہ بھیجیں