دیکھ لو گے ابھی دیکھا ہے




دیکھ لو گے ابھی دیکھا ہے
تم نہیں جانتے دنیا کیا ہے
ڈال جاتا ہے کوئی خاک میں جان
ورنہ یہ خاک کا پتلا کیا ہے
مانگنے والا تو بن ، بعد میں دیکھ
دینے والا تجھے دیتا کیا ہے
خود نہیں چھوڑتا بیدل میں یہ شہر
ورنہ اس شہر میں میرا کیا ہے
بیدل حیدریؔ




اپنا تبصرہ بھیجیں