اے مرے فن مجھے پاگل نہ بنا




اے مرے فن مجھے پاگل نہ بنا
چیزیاں خاک بنائے گی یہ رات
جس سے اک رات کا آنچل نہ بنا
تجھ پہ برسوں گا میں سب سے پہلے
اے سمندر مجے بادل نہ بنا
اے زمانے میں ترا سونا ہوں
اے زمانے مجھے پیتل نہ بنا
دل کو خواہش کے درندوں پہ نہ چھوڑ
بیدل اس شہر کو جنگل نہ بنا
بیدل حیدریؔ




اپنا تبصرہ بھیجیں