مری آنکھوں میں جو سیل رواں ہے




مری آنکھوں میں جو سیل رواں ہے
عجب بے رحم لمحوں کا دھواں ہے
مسافت غم کی بے حد، بے کنارہ
جدائی صورت سنگ گراں ہے
ستارے ریت کی مانند بکھرے
فضاؤں میں صدائے بے اماں ہے
افق جس روشنی سے بھر گیا تھا
کہاں و ہ آ فتاب مہرباں ہے
جہاں ٹھہر ا ہے وہ روشن ستارا
نجانے کس افق کی کہکشاں ہے
مرے سر پر تھا جس کے دم سے سایہ
وہ اس پل کس زمیں کا آسماں ہے
لئے حرف و معانی کا سمندر
کہاں اس دم وہ خاور ضوفشاں ہے
عجب ہے اضطراب بے یقینی !
مرے مالک! یہ کیسا امتحاں ہے
ابھی ٹوٹے گا یہ تاریک سپنا
مجھے ہر دم کچھ ایسا ہی گماں ہے
عنبرین صلاح الدین ؔ




اپنا تبصرہ بھیجیں