ارتقا کا ایک تاریک موڑ




فرش پر افتاں و خیزاں پھیکی پھیکی روشنی
وسعت عالم سے تر ساں سہمی سہمی زندگی
سایہ افگن بام و در پر شامیانے در دکے
اور ذہن شہر رخشاں چائے کی پیالی گم !
چائے کی پیالی میں گم تصویر حسن یار بھی
جذبہ، ذوق طلب بھی ، شوخی گفتار بھی
شعلہ ء سوز دروں بھی، عقل کی تلوار بھی !
فلسفہ ، سائنس ، تصوف ، شاعری، مذہب خدا
سب مری بے چارگی کے سامنے معذور محض
عشق اک کمرے کی دیواروں کے اندر منجمد
زندگی کاغذ کے انباروں کے نیچے نیم جاں
حسن سڑکوں پر غزالخوں
دور ویرانوں میں رقصاں
دشت میں صحرا میں حیراں
عشق کی م مائیگی سے
ذہن کی بے چارگی سے
علم کی افتادگی سے
بے خبر !
عرش صدیقی ؔ




اپنا تبصرہ بھیجیں