دل لگا کر لگ گیا ان کو بھی تنہا بیٹھنا (ردیف .. ن)




دل لگا کر لگ گیا ان کو بھی تنہا بیٹھنا
بارے اپنی بیکسی کی ہم نے پائی داد یاں
ہیں زوال آمادہ اجزا آفرینش کے تمام
مہر گردوں ہے چراغ رہ گزار باد یاں
ہے ترحم آفریں آرائش بیداد یاں
اشک چشم دام ہے ہر دانۂ صیاد یاں
ہے گداز موم انداز چکیدن ہائے خوں
نیش زنبور اصل ہے نشتر فصاد یاں
نا گوارا ہے ہمیں احسان صاحب دولتاں
ہے زر گل بھی نظر میں جوہر فولاد یاں
جنبش دل سے ہوئے ہیں عقدہ ہائے کار وا
کمتریں مزدور سنگیں دست ہے فرہاد یاں
قطرہ ہائے خون بسمل زیب داماں ہیں اسدؔ
ہے تماشہ کردنی گل چینیٔ جلاد یاں
مرزا غالب




اپنا تبصرہ بھیجیں