ساتھ




کتنی دیر تک
املتاس کے پیڑ کے نیچے
بیٹھ کے ہم نے باتیں کین
کچھ یاد نہیں
بس اتنا ادازہ ہے
چاند ہماری پشت سے ہو کر
آنکھوں تک آپہنچا !
پروین شاکر




اپنا تبصرہ بھیجیں