یہ سانحہ مرے وہم و گمان میں بھی نہ تھا




یہ سانحہ مرے وہم و گمان میں بھی نہ تھا
چراغ سامنے والے مکان میں بھی نہ تھا
جو پہلے روز سے دو آنگنوں میں تھا حائل
وہ فاصلہ تو زمین آسمان میں بھی نہ تھا
جمال پہلی شناسائی کا وہ اک لمحہ
اسے بھی یااد نہ تھا میرے دھیان میں بھی نہ تھا
جمال احسانی




اپنا تبصرہ بھیجیں