اسے تو کھو ہی چکے پھر خیال کیا اس کا




اسے تو کھو ہی چکے پھر خیال کیا اس کا
یہ فکر کیسی کہ اب ہو گا حال کیا اس کا
وہ ایک شخص جسے خود ہی چھوڑ بیٹھے تھے
گھلائے دیتا ہے دل کو ملال کیا اس کا
تمہاری آنکھوں مین چھلکیں ندامتیں کیسے ؟
جواب بننے لگا تھا سوال کیا اس کا
تمہارے اپنے ارادے میں کوئی جھول نہ تھا
کہو کہ ملنا تھا ایسا محال کیا اس کا
خالد شریف




اپنا تبصرہ بھیجیں