نفیر عمل




آہ کب تک گلہ شومئی تقدیر کریں
کب تلک ماتم ناکامی تدبیر کریں
کب تلک شیون جور فلک پیر کریں
کب تلک شکوہ بے مہری ایام کریں
نوجوانان وطن ! آؤ کوئی کام کریں

آؤ اجڑی ہوئی بستی کو پھر آباد کریں
آ ؤ کچھ پیروی مسلک فرباد کریں
یہ نہیں شرط وفا ، بیٹھ کے آرام کریں
نوجوان وطن ! آؤ کوئی کام کریں

رشتہ مکر و ریا توڑ بھی دیں، توڑ بھی دیں
کاسئی حرص و ہوا پھوڑ بھی دیں، پھوڑ بھی دیں
اپنی یہ طرفہ ادا چھوڑ بھی دیں، چھوڑ بھی دیں
آؤ کچھ کام کر یں، کام کریں ، کام کریں
نوجوانان وطن ! آؤ کوئی کام کریں
مجید امجد




اپنا تبصرہ بھیجیں