تا بہ مقدور انتظار کیا




تا بہ مقدور انتظار کیا
دل نے اب زور بے قرار کیا
ہم فقیروں سے بے ادائی کی
آن بیٹھے جو تم نے پیار کیا
دشمنی ہم سے کی زمانے نے
کہ جفا کار تجھ سا یار کیا
یہ تو ہم کا کارخانہ ہے
یاں وہی ہے جو اعتبار کیا
ایک ناوک نے اس کی مژگاں کے
طائر سدرہ تک شکار کیا
صد رگ جاں کو تاب دے باہم
تیری زلفوں کا ایک تار کیا
سخت کافر تھا جس نے پہلے میر
مذہب عشق اختیار کیا
میر تقی میر




اپنا تبصرہ بھیجیں