مسموم شہر کی ہے فضا کچھ نہ کچھ تو ہے




مسموم شہر کی ہے فضا کچھ نہ کچھ تو ہے
اے دل جواز آہ و بلکا کچھ نہ کچھ تو ہے
شاید نہ پڑ ھ سکیں اسے کچھ کج قیاس لوگ
دیوار برہمی پہ لکھا کچھ نہ کچھ تو ہے
اک راکھ کا اہے ڈھیر نگاہوں کے سامنے
جلنے کے بعد گھر میں بچا کچھ نہ کچھ تو ہے
نرمی ہے گفتگو میں مگر اس کے باوجود
محسن تمہارے سر میں ہوا کچھ نہ کچھ تو ہے
محسن احسان ؔ




اپنا تبصرہ بھیجیں