موسم کا اعتبار زیادہ نہیں کیا




موسم کا اعتبار زیادہ نہیں کیا
سو ہم نے اس سے پیار زیادہ نہیں کیا
کچھ تو فرید ہم نے پلنے میں دیر کی
کچھ اس نے انتظار زیادہ نہیں کیا
احمد فرید




اپنا تبصرہ بھیجیں