تین شع




تین شعر
غم زمانہ سے کہہ دو کہ انتظار کرے
کسی کی زلف کے سائے میں سو گیا ہوں میں

تلاش کر نہیں سکتا مجھے کوئی غم بھی
تمہارے لمس کی خوشبو میں کھو گیا ہوں میں

نہ تیرے وصل کی خواہش نہ تیرے ہجر کا غم
مرا خیال ہے پتھر کا ہو گیا ہوں میں
احمد فرید




اپنا تبصرہ بھیجیں