راہ گم کردہ کو منزل کا پتا دے شاہا




راہ گم کردہ کو منزل کا پتا دے شاہا
میری بگڑی ہوئی تقدیر بنا دے شاہا
جانے انجانے میں جو جرم ہوئے ہیں مجھ سے
میرے ان جرموں کی فہرست جلا دے شاہا
نہیں معلوم، یہ افتاد پڑی ہے کیسی
باندھتا توڑتا رہتا ہوں ارادے شاہا
یہ کسی پل بھی مجھے لینے نہیں دیتے قرار
میرے بیمار ارادوں کو شفا دے شاہا
یہ مرا دل ہے وہ ناؤ کہ جو منجدھار میں ہے
ڈوبتی ناؤ کنارے پہ لگا دے شاہا
احمد راہیؔ




اپنا تبصرہ بھیجیں