ہم کو خواب اور حقیقت نے ڈسا ہے مل کر




ہم کو خواب اور حقیقت نے ڈسا ہے مل کر
زہر، اب کون سا باقی ہے جو راس آئے گا
ایک عالم سے کب آسودہ ہوا ہے انساں
وہ تو جنت میں بھی دوزخ کی کمی پائے گا
آل احمد سرور ؔ




اپنا تبصرہ بھیجیں